لاہور ۔ 08 جون2024ء) انسداد دہشت گردی عدالت نے عسکری ٹاور حملہ تھانہ شادمان نذر آتش اور راحت بیکری چوک میں پولیس کی گاڑیاں جلانے کے 4مقدمات ڈاکٹر یاسمین راشد کی درخواست ضمانت پر سماعت 21جون تک ملتوی کر دی اور پراسکیوشن کو مقدمات کا ریکارڈ پیش کرنے کا حکم دیا۔ انسداد دہشت گردی عدالت کے ایڈمن جج خالد ارشد نے سماعت کی ۔
پراسکیوشن نے مقدمات کا ریکارڈ پیش کرنے کے لئے مہلت طلب کی جبکہ اسپیشل پراسیکیوٹر بھی دلائل کیلئے پیش نہیں ہوئے جس پر عدالت نے سماعت 21 جون تک ملتوی کر دی عدالت نے پراسکیوشن کو مقدمات کا ریکارڈ پیش کرنے کا حکم دے دیا اور اسپیشل پراسیکیوٹر کو ضمانتوں ہر دلائل کا آخری موقع دے دیا ۔ڈاکٹر یاسمین راشد کے وکیل ملک برھان معظم ایڈووکیٹ نے دلائل مکمل کر رکھے ہیں ۔
ڈاکٹر یاسمین راشد نے جیل سے وکلا کی وساطت سے ضمانت کی درخواستیں دائر کر رکھی ہیں ،ڈاکٹر یاسمین راشد پر عسکری ٹاور حملہ اور تھانہ شادمان نزر آتش کرنے،راحت بیکری چوک میں پولیس کی گاڑیاں جلانے سمیت دیگر مقدمات میں ضمانت کی درخواستیں دائر کر رکھی ہیں، مقدمات میں بغاوت اور عوام کو فسادات پر اکسانے سمیت دیگر سنگین دفعات شامل ہیں۔اب تک نو مئی کے دو مقدمات میں ڈاکٹر یاسمین راشد کی درخواست ضمانت منظور ہو چکی ہے۔